قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس آج ہو رہا ہے

قومی سلامتی کمیٹی کابھارت پرمسئلہ کشمیرکوحل کرنے پر زور

قومی سلامتی کمیٹی نے مقبوضہ جموں وکشمیر میں بھارتی مظالم کی شدید مذمت کرتے ہوئے اس بات کااعادہ کیاہے کہ پاکستان پڑوسی ملک کی کسی مہم جوئی یاجارحیت کے خلاف اپنے دفاع کیلئے تیار ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے اسلام آباد میں قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے بھارت کی کسی بھی مہم جوئی یا جارحیت کاقوم کی مکمل حمایت سے منہ توڑ جواب دینے کے پاکستان کے عزم کااعادہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ہمیشہ کشمیریوں کے ساتھ کھڑا رہے گا اور مسئلہ کشمیر کے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں اورکشمیریوں کی امنگوں کے مطابق منصفانہ حل کے موقف سے ہرگز دستبردار نہیں ہوگا۔
وزیراعظم نے عالمی رہنماؤں اور بین الاقوامی تنظیموں کی توجہ بھارتی قیادت کے یکطرفہ، غیرذمہ دارانہ اور غیردانشمندانہ طرز عمل کی طرف مبذول کرائی۔ اجلاس میں کہاگیاکہ بھارتی کارروائیوں سے مقبوضہ کشمیراورکنٹرول لائن کی صورتحال تیزی سے خراب ہورہی ہے۔ اجلاس میں بھارت کے مشتبہ اقدامات کے ذریعے عدم استحکام پیدا کرنے کی کوششوں پر تشویش ظاہر کی گئی۔ قومی سلامتی کمیٹی نے کہاکہ مقبوضہ وادی کی نہتی آبادی کے خلاف بھارتی فوجیوں کی تعداد میں حالیہ اضافہ اورطاقت کاوحشیانہ استعمال آگ کو ہوادینے کے مترادف ہے۔
قومی سلامتی کمیٹی نے ایسے وقت میں جب پاکستان اورعالمی برادری کی توجہ افغان تنازع کے حل پر مرکوز ہے، بھارتی حکمت عملی کی شدیدمذمت کی۔ اجلاس میں عزم ظاہر کیاگیاکہ پاکستان مقبوضہ جموں وکشمیرکے عوام کی حق خودارادیت کے حصول کیلئے اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق منصفانہ جدوجہدکی ہرممکن سفارتی، اخلاقی اور سیاسی حمایت جاری رکھے گا۔ کمیٹی نے اس بات کااعادہ کیا کہ کشمیر دیرینہ بین الاقوامی تنازع ہے جسے پرامن طورپرحل کرنے کی ضرورت ہے۔ کمیٹی نے بھارت پرزوردیاکہ وہ کشمیرکے مسئلے کوکشمیری عوام کی امنگوں کے مطابق حل کرانے کے لئے اقدامات کرے۔

یہ خبر پڑھیئے

یوکرین کی صورتحال پر سلامتی کونسل کا اجلاس

مقامی وقت کے مطابق 8 تاریخ کو اقوام متحدہ میں روس کے مستقل مشن کی …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons