تازہ ترین

ایس سی او کے ممبر ممالک کیلئے باہمی تعاون میں اضافہ بنیادی ضرورت ہے، چینی صدر

چینی صدر شی چن پھنگ نے کہا ہے کہ شنگھائی تعاون تنظیم کے ممبر ممالک کیلئے سب سے پہلے باہمی تعاون میں اضافہ کرنے کی ضرورت ہے۔

سمرقند میں منعقدہ شنگھائی تعاون تنظیم کے سربراہان مملکت کی کونسل کے 22ویں اجلاس سے اہم خطاب کرتے ہوئے انہوں نے اس امر پر زور دیا کہ ممبر ممالک اعلیٰ سطحی تبادلوں اور سٹریٹجک روابط کو مضبوط بنائیں، باہمی افہام و تفہیم اور سیاسی باہمی اعتماد کو گہرا کریں، سلامتی اور ترقی کے مفادات کے تحفظ کیلئے ایک دوسرے کی کوششوں کی حمایت کریں، کسی بھی بہانے دوسرے ممالک کے اندرونی معاملات میں مداخلت کی مشترکہ مخالفت کریں اور ملک کے مستقبل کو اپنے زورِ بازو پر بہتر بنائیں۔

چینی صدر  نے کہا کہ دوسرے اصول کے تحت ممبر ممالک سلامتی کے شعبے میں تعاون کو وسعت دیں۔ انہوں نے اس امر پر تمام فریقین کا خیرمقدم کیا کہ وہ عالمی سلامتی کے اقدام کے نفاذ میں حصہ لیں، مشترکہ اور جامع تعاون پر مبنی اور پائیدار سلامتی کے تصور کو برقرار رکھیں اور ایک متوازن، مؤثر اور پائیدار حفاظتی ڈھانچے کی تعمیر کو فروغ دیں۔ شی چن پھنگ نے مزید کہا کہ بُری قوتوں یعنی منشیات کی اسمگلنگ، سائبر اور بین الاقوامی منظم جرائم، اہم معلومات کی حفاظت، حیاتیاتی حفاظت اور خلائی تحفظ جیسے غیر روایتی چیلنجز کا مؤثر طریقے سے جواب دیں۔

چینی صدر نے کہا کہ چین آئندہ 5 سال کے دوران رکن ممالک کیلئے قانون نافذ کرنیوالے 2 ہزار افسران کو تربیت دینے، انسداد دہشتگردی سے منسلک افراد کیلئے چین-شنگھائی تعاون تنظیم کے تربیتی مرکز کے قیام اور تمام فریقین کی قانون کے نفاذ کی صلاحیتوں کو مضبوط بنانے کیلئے تیار ہے۔

یہ خبر پڑھیئے

عالمی معیشت میں بہتری میں چین کا نمایاں کردار: جانیئے تجزیہ کار مخدوم بابر کی زبانی

Show Buttons
Hide Buttons