تازہ ترین

چین میں اصلاحات اور کھلے پن کی پالیسی جاری رہے گی، سی آر آئی کا تبصرہ!

چین میں اصلاحات اور کھلے پن کی پالیسی کے نفاذ کے گزشتہ چالیس برسوں میں مختلف شعبوں میں نمایاں کامیابیاں حاصل ہوئی ہیں۔ رائے عامہ اور میڈیا اداروں کی اکثریت کا خیال ہے کہ نئے نظام پر عمل درآمد کرتے ہوئے اپنے آپ کی بہتری، چینی عوام کی محنت اور ذہانت چین کی تیز رفتار ترقی کا راز ہے لیکن اس کے ساتھ ہی ایک اور اہم بات یہ ہے کہ چینی حکومت کا استحکام، اصلاحات اور کھلے پن کی پالیسی کی راہ پر مسلسل گامزن رہنے کی بنیاد ہے۔ اس کے بغیر سب کچھ بے کار ہو گا۔

چین میں اصلاحات کا عمل دیہات میں شروع ہوا۔ سن انیس سو بیاسی تا دو ہزار اٹھارہ چین کی مرکزی حکومت کی ہر سال کی اولین دستاویزات، چین کی دیہی اصلاحات اور دیہی ترقی سے تعلق رکھتی ہیں۔ چینی حکومت نے دیہی علاقوں کی خوشحالی کے لئے ایک طویل مدتی منصوبہ بندی کی ہے۔ دوسری جانب چین کا دیگر ممالک کے لئے اپنا دروازہ کھولنے کا آغاز صوبہ گوانگ دونگ کے شہر شن چن میں ہوا تھا۔ اس کے بعد چین کے مختلف علاقوں میں اقتصادی ترقیاتی زونز اور آزاد تجارتی زونز کے قیام کی کوشش کی گئی۔ مستقبل میں چین اسی درست راستے پر گامزن رہے گا تا کہ کھلے پن کا معیار ایک نئی بلندی تک پہنچ جائے۔ دیہی علاقوں اور شہروں کی اصلاحات چین کی ترقی کے دو شاندار باب بن گئے ہیں۔ پچھلے سال اکتوبر میں چینی کمیونسٹ پارٹی کی انیسویں قومی کانگریس میں اس ہدف کا تعین کیا گیا کہ دو ہزار بیس تک چین میں ایک بنیادی خوشحال معاشرہ قائم کیا جائے گا جب تک دو ہزار پینتیس تک چین ایک جدید، مضبوط اور سازگار ملک بن جائے گا۔ کسی بھی ملک کے لئے اصلاحات ایک مشکل عمل ہے۔ چین میں اصلاحات اور کھلے پن کی پالیسی مسلسل چالیس برس تک جاری رہی۔ یہ چینی نظام کی برتری کی عکاس ہے۔ اس وقت عالمی صورتحال غیر یقینی ہے اور اس کے تناظر میں چین کی مستحکم ترقی عالمی معیشت میں اضافے کے لئے بہت اہم ہے۔

یہ خبر پڑھیئے

بلوچستان پولیس کی جانب سے نسیم شاہ کو پولیس کا اعزازی ڈی ایس پی بنا دیا گیا

بلوچستان پولیس کی جانب سے نسیم شاہ کو پولیس کا اعزازی ڈی ایس پی بنا دیا گیا

پاکستان کرکٹ ٹیم کے فاسٹ بولر نسیم شاہ کو بلوچستان پولیس کا خیر سگالی سفیر …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons